سلفیورک ایسڈ کلراٹھی زمینوں کی اصلاح اورمٹی کے اوپر سخت تہہ کو بننے سے روکنے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔ مختلف زمینی مسائل جن میں سلفیورک ایسڈ کا استعما فائدہ مند ہے درج ذیل ہیں:

ایسی زمینیں جہاں جپسم زیادہ گہرائی تک صحیح عمل نہیں کر سکتا وہاں سلفیورک ایسڈ سے بہتر نتائج حاصل ہوتے ہیں اور زمین کی زرخیزی میں اضافہ ہوتا ہے۔

ایسی زمینیں جنکی پی ایچ زیادہ ہو جائے انکی اصلاح کے لئے سلفیورک ایسڈ کا استعمال کیا جاتا ہے۔ کیونکہ مٹی کی پی ایچ اگر زیادہ ہو تو بہت سے اجزاء جیسا کہ فاسفورس اور زنک پودوں تک نہیں پہنچ پاتے۔ سلفیورک ایسڈ کے ذریعے مٹی کی پی ایچ کو کم کیا جاتا ہے۔ جسکی وجہ سے مختلف اجزاء پودوں تک پہنچ جاتے ہیں اور پودوں کی نشونما اچھی ہوتی ہے۔

ایسی زمینیں جہاں کیلشیم کاربونیٹ ( لائم) کی مقدار زیادہ ہو وہاں سلفیورک ایسڈ کا استعمال فائدہ مند ثابت ہوتا ہے۔ سلفیورک ایسڈ کو آبپاشی کرتے وقت پانی کے ساتھ ملا کر کھیت میں ڈالا جاتا ہے ۔یہ کیلشیم کاربونیٹ (لائم) کو حل کرتا ہے جس کی وجہ سے کیلشیم نکلتا ہے اور مٹی میں موجود سوڈیم کی جگہ لیتا ہے۔

سوڈک (کالے کلر والی زمینیں) زمین کی ساخت خراب ہو جاتی ہے جسکی وجہ سے زمین میں پانی کھڑا رہتا ہے ۔ کھیت میں پانی کا کھڑا رہنا اکثر فصلوں کے لئے نقصان دہ ہوتا ہے۔ ایسی زمینوں سے کاشتکار اچھی پیداوار نہیں حاصل کر سکتے۔سلفیورک ایسڈ کے استعمال سے پانی کی زمین میں جذب ہونے کی صلاحیت کو بہتر کیا جاتا ہے۔جس سے کسی حدتک پیداوار میں بھی بہتری آتی ہے۔

سلفیورک ایسڈ کا استعمال کسی حد تک خطرناک بھی ثابت ہوتا ہے۔ اسکا استعمال بہت احتیاط سے کیا جاتا ہے۔ اسکا بہت زیادہ استعمال بہت سے ماحولیاتی مسائل کی وجہ بھی بنتا ہے۔ اسکے علاوہ یہ مٹی میں موجود قدرتی کھادوں کے ساتھ مل جاتا ہے اور مٹی میں موجود مائکرو آرگنزمز کے لئے خطرناک ہوتا ہے۔