دھان بذریعہ ڈرل کاشت

دھان بذریعہ ڈرل کاشت میں خشک تیار زمین میں ڈائریکٹ سیڈ ڈ رائس ڈرل کے ساتھ بوائی کی جاتی ہے۔ قطاروں کا باہمی فاصلہ نو انچ اور بیج کی گہرائی ڈیڑھ انچ تک رکھی جاتی ہے۔ اگر کھیت میں کوئی سیاڑ بیج کے بغیر رہ جائے تو اس میں ہاتھ سے بیج گرا کر مٹی کی ہلکی تہہ سے ڈھانپ دیں۔ بوائی کے وقت ڈالی جانے والی فاسفورس اور پوٹاش کی تجویز کردہ کھادیں بذریعہ ڈرل ڈال سکتے ہیں۔ بوائی کے بعد کھیت میں چھوٹے کیارے بناکر ہلکا پانی لگا دیا جاتا ہے۔

دھان بذریعہ چھٹہ کاشت

اگر سیڈ ڈرل دستیاب نہ ہو تو دھان بذریعہ چھٹہ بھی براہ راست کاشت کر سکتے ہیں ۔ اس کے لئے خشک زمین تیار کرنے کے بعد شمالاً جنوباً ہلکا ہل چلیا جاتا ہے ۔ اس جات کا خیال رکھیں کہ پھالہ زمین میں ایک انچ سے زیادہ گہرا نہ جائے۔ بیج کا دوہرا چھٹہ کرکے اسی رخ کا سہاگہ پھیر دیں۔بوائی کے وقت ڈالی جانے والی فاسفورس اور پوٹاش والی کھاد کی تجویز کردہ مقدار بھی زمین کی تیاری کے دوران ڈالی جتی ہیں۔ بوائی کے بعد کھیت میں چھوٹے کیارے بناکر ہلکا پانی لگا دیا جاتا ہے۔

اگر دھان کی کاشت وتر والی زمین میں ہو رہی ہو تو زمین تیار کرنے کے بعد بذریعہ ڈرل یا چھٹہ بوائی کر کےسہاگہ پھیر دیں اور چھوٹے کیارے بنادیں۔ چند دن بعد جب فصل کا اگاؤ مکمل ہو جائے یعنی شگوفے زمین سے باہر نکل آئیں تو کھیت کو ہلکاسا پانی لگادیں۔پھر ایک ماہ تک تروتر کا پانی لگائیں اور بعد میں وتر کا پانی لگاتے رہیں۔