میوریٹ آف پوٹاش ایک غیر نامیاتی کھاد ہے جسے پوٹاشیم کلورائیڈ بھی کہا جاتا ہے۔ اس میں ساٹھ فیصد پوٹاشیم ہوتی ہے۔ پوٹاشیم پودوں کے لئے اہم غذائی اجزاء کی حیثیت رکھتا ہے۔ پودوں میں پوٹاشیم کی مناسب مقدار کی وجہ سے پودوں میں پانی کی کمی نہیں ہوتی۔ پوٹآشیم کی موجودگی پھلوں اور سبزیوں کی رنگت اور ذائقہ کو بہتر بنانے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ کینیڈا دنیا کا سب سے زیادہ پوٹاش کی کھادیں بنانے والا ملک ہے۔ اس کی سالانہ پیداوار 13.3 ملین میٹرک ٹن ہے۔

ایم او پی پوٹاش کے لئے استعمال ہونے والی کھادوں میں سب سے زیادہ فروخت اور استعمال ہونے والی کھادوں میں سے ایک ہے۔ ایم او پی  سالانہ پچپن ملین ٹن فروخت اور استعمال کی جاتی ہے۔ ایم او پی کھاد پوٹاش فراہم کرنے کا ایک ذریعہ ہے۔ ایم او پی کھاد سب فصلوں کو نہیں دی جا سکتی یہ صرف مخصوص فصلوں پر ہی ڈالی جاتی ہے جیسا کہ کماد، پھلوں کے درختوں اور سبزیاں۔  ایم او پی  کا استعمال ایسی زمینوں پر کیا جاتا ہے جہاں کلورائیڈ کی کمی ہو۔ یہ کھاد یوریا، امونیم سلفیٹ اور مونو امونیم فاسفیٹ کے ساتھ آسانی سے ملا کر استعمال کی جاسکتی ہے۔

ایم او پی کو کان کنی کے ذریعےزمین سے نکالا جاتا ہے اور پروسیسنگ کے ذریعے سوڈیم سے الگ کیا جاتا ہے۔ ایم او پی کا رنگ سرخ سے سفید ہوتا ہے۔اس کی سرخ رنگت آئرن آکسائیڈ کی موجودگی کی وجہ سے ہوتی ہے۔ کاشتکارفصل لگانے سے پہلےایم او پی کھاد کو مٹی کی سطح پر پھیلا دیتے ہیں۔ اسے بیج کے قریب بینڈینگ کے طریقے سےبھی ڈالاجاتا ہے۔ چونکہ کھاد کے ٹوٹنے سے کلورائیڈ کی مقدار زمین میں بڑھتی ہے اس لئے ایم او پی کو بیج سے تھوڑا فاصلے پر ڈالا جاتا ہے تاکہ بیج کا اگاؤ متاثر نہ ہو۔

ایم او پی کھاد کے فوائد

ایم او پی کھاد دانے دار حالت میں ہوتی ہے جس کی وجہ سے یہ پورے کھیت میں برابر پہنچتی ہے۔ ایم او پی کھاد پوٹاش کی باقی کھادوں کی نسبت سستی ہوتی ہے۔

ایم او پی کھاد کے استعمال سے فصل پر موجود کیڑوں کے انتظامات کی لاگت میں کمی آتی ہے۔

ایم او پی کے نقصانات

ایسی زمینیں جہاں کلورائیڈ کی مقدار زیادہ ہو یا فصلوں کو آبپاشی کے لئے ایسا پانی دیا جا رہا ہو جس میں کلورایئڈ کی مقدار زیادہ ہو ایسی حالت میں ایم او پی کے استعمال سے زمین میں کلورائیڈ کی مقدار بڑھنے کا امکان ہوتا ہے جو کہ پودوں اور فصلوں کے لئے نقصاندہ ہے۔

ایم او پی کھاد میں موجود کلورائیڈ مٹی کی نمکیات کو بڑھادیتی ہے جسکی وجہ سے پودوں کی زمین سے پانی لینے کی صلاحیت متاثر ہوتی ہے۔

زیادہ پی ایچ والی زمینوں میں اسکے استعمال سے خوردبینی جانداروں کے کام کرنے پر بھی برا اثر پڑتا ہے۔