آجکل پوری دنیا میں موسمیاتی تبدیلیوں کی لپیٹ میں ہےاور یہ تبدیلیاں بہت سے نقصانات کی وجہ بھی بن رہی ہیں۔ ان نقصانات میں سے ایک مختلف بیماریوں کا پھیلنا اور جانوروں سے انسانوں میں منتقل ہونا بھی ہے۔ ان بیماریوں کی وجہ پیتھوجنز (بیکٹیریا، وائرس یا پیراسائٹ) ہوتے ہیں جو جانوروں سے انسانوں میں براہ راست رابطے یا بالواسطہ رابطے کے ذریعے منتقل ہوتےہیں۔ عام طور پر، پہلا متاثرہ انسان پیتھوجنز کو دوسرے انسان میں منتقل کرتا ہے اور اس طرح یہ بیماریاں پھیلتی ہیں ۔

زونوسس بھی ایک ایسی بیماری ہے جسکی جانوروں سے انسانوں میں منتقلی میں تیزی آئی ہے۔ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ زونوٹک بیماریاں پھیلنےکی بہت سی وجاہات ہیں جن مین سے ایک موسمی تبدیلی بھی ہے۔موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے وہ جانور جو پہلے جغرافیائی طور پر بہت سے علاقوں سے دور تھے وہ جانور خوراک کے حصول اور ماحولیاتی تبدیلی کے اثرات سے بچنے کے لئے نئے علاقوں کی طرف منتقل ہو رہے ہیں جسکی وجہ سے وہ نئی جگہوں پر موجود جانوروں اور انسانوں کے ساتھ رابطے میں آتے ہیں اور ان جانوروں میں موجود بیماریاں پھیلانے والے پیتھوجنز انسانوں میں منتقل ہو جاتے ہیں۔ موسمیاتی تبدیلی کی وجہ سے بہت سی بیماریوں کے پیتھوجنز میں بھی تبدیلی آتی ہے۔ پیتھوجنز جب نئے میزبان تک پہنچ جاتے ہیں تو اس تبدیلی کی وجہ سے انکی نئی اقسام کے بننے کا امکان ہوتا ہے اور ہر نئی قسم ایک نئے انفیکشن کو پھیلانے کا ذریعہ بنتی ہے۔ افریقی اور جنوب مشرقی ایشیا کے پہاڑی علاقوں میں بیماریاں پھیلنےکے امکانات سب سے زیادہ ہیں۔

جنگلی جانوروں میں وائرس کی کم ازکم دس ہزار ایسی اقسام موجود ہیں جن میں انسانوں کو متاثر کرنے کی صلاحیت موجود ہے ۔اسکی ایک مثال آجکل پاکستانی جانوروں میں پھیلنے والی بیماری منکی پوکس ہے۔ منکی پوکس ایک وائرس کی وجہ سے ہوتی ہے۔ یہ وائرس چیچک جیسے وائرس کی شاخ میں سے ہے۔ منکی پوکس بھی ایک زونوٹک بیماری ہے اور موسمی تبدیلی منکی پوکس کے پھیلنے کا بھی سبب بنی ہے۔اب تک سولہ ممالک میں منکی پوکس سے متاثرہ افراد سامنے آئے ہیں۔ چونکہ ابھی تک اسے علاج کے لئے کوئی ویکسین نہیں بنائی گئی اسلئے اسکے علاج کے لئے چیچک سے بچاؤ کی ویکسین استعمال کی جاتی ہے جو اس بیماری کے خلاف پچاسی فیصد تک مؤثر ثابت ہوئی ہے۔

وقت کے ساتھ ساتھ آب و ہوا بدل رہی ہے۔ جیسے جیسے کرہ ارض گرم ہو رہا ہے،بہت سی ایسی بیماریاں جو کبھی گرم عرض بلد تک محدود تھیں آہستہ آہستہ دوسرے علاقوں میں پھیل رہی ہیں۔موسمی تبدیلیوں کے اثرات اور ان بیماریوں سے بچاؤ کے لئے ضروری ہے کہ ہمیں جنگلات کی غیر ضروری کٹائی کو بند کرنا چاہئے ، اسکے علاوہ موسمیاتی تبدیلیوں کی دوسری وجوہات سے بھی نمٹنا چاہئے تبھی ہم ان سب مسائل کو ختم کر سکتے جن سے آجکل پوری دنیا دوچار ہے۔